وسیع ترملی ّ مفاد کو پیش نظر رکھنا ہی حکمت کا تقاضا ہے

Updated: October 08, 2021, 5:41 PM IST | Maulana Khalid Saifulah Rahmani

حضرت عمرؓ نے فرمایا تھا کہ حکمت یہ نہیں ہے کہ آدمی شر کے مقابلہ میں خیر کو اختیار کرلے؛ بلکہ دانائی یہ ہے کہ جہاں دوبرائیاں ہوں وہاں کم درجہ کی برائی سے نباہ کرے

To make wise decisions for Muslims to remove their political ineffectiveness in the country.Picture:INN
ملک میں اپنی سیاسی بے اثری دور کرنے کیلئے مسلمانوں کو بہت سوچ سمجھ کر فیصلے کرنے چاہئیں۔ تصویر: آئی این این

اللہ تعالیٰ نے اس کائنات کو مجموعہ اضداد بنایا ہے، یہاں روشنی بھی ہے اور تاریکی بھی، حرارت بھی ہے اور خنکی بھی، اس دنیا کو آگ کی بھی ضرورت ہے اور پانی کی بھی، مٹھاس کی بھی اور کڑواہٹ کی بھی، کائنات کی فطرت کے مطابق اللہ تعالیٰ نے انسان کی زندگی اور اس کے احوال میں متضاد کیفیت رکھی ہے۔ انسان خوش بھی ہوتاہے اور غم سے بھی دوچار ہوتا ہے۔ یہی کیفیت اس کے دائرۂ  تعلقات میں بھی ہے۔اس کے دوست بھی ہوتے ہیں اور دشمن بھی۔ اگر محبت کرنے والے اسے گلے لگاتے ہیں تو کچھ نفرت کرنے والے اس کے جیب وگریباں سے کھیلنے پر تُلے رہتے ہیں،اگر اس کو ان لوگوں سے سابقہ پیش آتاہے جو عدل وانصاف کرنے والے ہیں تو وہ ایسے لوگوں سے بھی دوچار ہوتاہے جو اس پر ظلم وزیادتی کو روا رکھتے ہیں۔ انسان کو ان کے درمیان انتخاب سے کام لینا پڑتا ہے۔ وہ بلیوں کی تو اپنے گھر میں پرورش کرسکتاہے سانپوں کی نہیں؛ کیونکہ اسے معلوم ہے کہ بلیاں اس کے گھر سے چند لقمے ہی کھاسکتی ہیں؛ لیکن وہ سانپ کی طرح ڈسیںگی نہیں؛ اس لئے یہ بات انسان کی فطرت میں رکھی گئی ہے کہ اگر خیروشر میں ٹکراؤ ہو تو وہ خیر کی طرف لپکے اور شرسے اپنے آپ کو بچائے، اس کے برخلاف عمل وہی شخص کرسکتا ہے جو یاتو عقل سے محروم ہو یاحد درجہ کم عقل ہو۔
انسان کی عقل کا امتحان اس وقت ہوتاہے، جب دو مضرت رساں اور نقصان دہ چیزیں اس کے سامنے ہوں اور اس کے لئے کوئی تیسرا راستہ نہ ہو۔ اسے گڑھے ہی کو منتخب کرنا ہو، چاہے وہ ایک چھوٹے گڑھے کو منتخب کرے، جس میں پھسل جانے کا اندیشہ ہو یاوہ ایک ایسی کھائی کا انتخاب کرے، جس کا انجام بظاہر ہلاکت کے سوا کچھ اور نہ ہو۔ اگر وہ آگ سے بچ نہیں سکتا، چاہے ایک چنگاری پر سے گزرے یا آگ کے شعلہ سے گزرکر جانا پڑے، تو وہ چنگاری کو گوارا کرلیتا ہے۔  ایسی صورت حال میں انسان کی عقل اور اس کی ترجیحی صلاحیت کا امتحان ہوتاہےاو ران حالات میں بہتر انتخاب ہی اصل میں حکمت ودانائی ہے۔
عربی زبان کے ماہرین نے لکھاہے کہ حکمت کا لفظ ’’حکم‘‘سے ماخوذ ہے، جس کے معنی معاملہ کو درست رکھنے کے لئے کسی عمل کو روکنے کے آتے ہیں ’’المنع للإصلاح‘‘ (مفردات القرآن: ۱۲۶) ۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ’’جس کو اللہ  نے حکمت سے نواز دیاہو، اسے خیر کثیر عطا کیا گیا۔‘‘ (البقرۃ: ۲۶۹)۔ اللہ تعالیٰ نے حضرت  لقمان کی تعریف کرتے ہوئے فرمایا کہ ’’ہم نے ان کو حکمت سے نوازا تھا۔‘‘ (لقمان: ۱۲)
 دعوت دین کا کام بڑا اہم بھی ہے؛ نازک بھی ہے او رمصلحت کے ساتھ کرنے کا بھی؛ اس لئے خاص طور پر فرمایا گیاکہ’’ اللہ کے دین کی طرف حکمت کے ساتھ بلایاکرو۔‘‘ (النحل: ۱۲۵) رسول اللہ ﷺ نے حضرت عبداللہ بن عباسؓ کو چمٹا لیا    اور دعادیتے ہوئے فرمایا: اے اللہ ! اسے حکمت سے نوازدیجئے:  (ترمذی: حدیث نمبر ۳۸۲۴) 
حضرت عبدللہ بن عباس ؓ ہی سے مروی ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا : دو ہی آدمی اصل میں رشک کے لائق ہیں، ان میں سے ایک وہ شخص ہے جس کو اللہ تعالیٰ نے حکمت سے نوازا ہو، وہ اس کے ذریعہ فیصلے کرتاہواور تعلیم وتربیت کی خدمت انجام دیتا ہو۔(بخاری:حدیث نمبر: ۷۱۴۱) اس حدیث میں اس بات کی طرف بھی اشارہ ہو گیا کہ جب کوئی فرد یا گروہ اللہ کی طرف سے حکمت و دانائی سے سرفراز ہوتاہے تو وہ صحیح فیصلے کرپاتا ہے۔
اچھے اور بُرے حالات سے افراد بھی دوچار ہوتے ہیں اور قومیں بھی دوچار ہوتی ہیں،کم درجہ کے دشمنوں اور بڑے دشمنوں سے افراد کو بھی سابقہ پیش آتاہے اور ملتوں کو بھی، انفرادی زندگی میں تو عموماً انسان کا رویہ یہی ہوتاہے کہ وہ کم تر نقصان کو گوارا کرلے اور بڑے نقصان سے اپنے آپ کو بچائے رکھے؛ لیکن اجتماعی زندگی میں بسا اوقات ایسے فیصلہ میں قو می جذبات حارج ہوجاتے ہیں، اور بعض تکلیف دہ واقعات انسان کو اس درجہ متاثر کردیتے ہیںکہ وہ اپنے فیصلے میں حکمت ومصلحت کے پہلو کی رعایت نہیں کرپاتا، پھر اس کے نقصانات اتنے دوررس ہوجاتے ہیں کہ ان کی تلافی دشوار ہوجاتی ہے۔ تاریخ میں تو اس کی بہت سی مثالیں ہے؛لیکن خود ہندوستان کی حالیہ تاریخ میں بھی اس کی کئی مثالیں مل سکتی ہیں:
 جیسے ہندوستان کی تقسیم کا مسئلہ۔ اُس وقت بر صغیرمیں علماء کی بڑی تعداد کا خیال تھا کہ متحدہ ہند وستا ن ہی مسلمانوں کے مفاد میں ہے، ملک کی تقسیم ملک کو بھی نقصان پہنچائے گی اور مسلمانوں کو خاص طور پر اس سے نقصان پہنچے گا، مگر لوگ جذبات کی رَو میں بہہ گئے، انہوں نے علماء پر لعن طعن شروع کردی، او ر انہیں اکثریتی فرقہ کا ایجنٹ ٹھہرایا گیا، اکثریت میں جو فرقہ پرست اور چالاک لوگ تھے،  انہوں نے اس حقیقت کو سمجھ لیا کہ مسلمانوں کو چھوٹاسا ’’ہوم لینڈ‘‘ دینے میں ہندو اکثریت کی بھلائی ہے؛ کیونکہ وہ طویل عرصہ سے محکومانہ زندگی گزارتے رہے ہیں، اب انہیں ایک بڑا خطہ حاصل ہو جائے تو وہ مکمل اختیار  کے ساتھ حکومت کرسکیںگے۔ بہر حال ملک تقسیم ہوا اور ہزاروں لوگوں کی جانیں گئیں، ان میں مسلمان بھی تھے اور ہندو بھی۔ بے شک،  بے قصور مارے جانے والے کسی بھی انسان کی ہلاکت قابل افسوس ہے لیکن بہر حال ایسے مظلوموں میں غالب اکثریت مسلمانوں کی تھی۔ آپ جانتے ہیں کہ آج بھی ہندوستان کے مسلمان تقسیم کی سزا بھگت رہے ہیں۔ اس کے نتیجہ میں جو ملک حاصل ہوا، وہ ایسا کہ پچیس ہی سال میں دوٹکڑے ہوگیا اور جو کچھ بچاکھچا حصہ موجود ہے، وہ خود اندر سے ٹوٹ رہا ہے اور پوری دنیا میں بدنامی اور رسوائی کا عنوان بنا ہواہے۔ہندوستان کی بعض مسلم ریاستیں ۱۹۴۸ء تک موجود تھیں، قومی سطح کے بعض مسلم قائدین نے حکومت ہند کو اس بات پر آمادہ کرلیا تھا کہ وہ چند چیزوں میں اشتراک کے ساتھ اس مسلم ریاست کو باقی رہنے دے، ریاست کے حکمراں بھی اس کے حق میں تھے؛ کیونکہ مستقبل کو اپنی آنکھوں سے دیکھ رہے تھے کہ ایک ایسا ملک جس کے پاس تربیت یافتہ فوج نہ ہو، ہتھیار کا ذخیر ہ نہ ہو، دوست ملک سے رابطہ نہ ہو، اور فضائیہ اور بحریہ نہ ہو،  وہ بڑی طاقت کا مقابلہ نہیں کرسکتا؛ اس لئے انہوں نے صلح کا راستہ اختیار کرنے کو ترجیح دی؛ تاکہ خوں ریزی سے بچاجاسکے اور پُرامن طریقہ پر مسئلہ حل ہو جائے؛ لیکن کچھ جذباتی لوگوں نے قوم کو ورغلایا اورایسے دعوے کرنے لگے جوان کی طاقت سے باہر تھے، نتیجہ یہ ہو ا کہ ملک بھی ختم ہوا اور بے شمار مسلمان، مردوعورت، بوڑھے بچے تہ تیغ کردئیے گئے، ممکن ہے کہ اس طرح کے فیصلے پورے جذبۂ خلوص کے ساتھ کئے گئے ہوں؛ لیکن یقیناً یہ حکمت ومصلحت اور تدبر کے تقاضوں کے خلاف تھے اور ان کا جو نقصان ہونا تھا، وہ ہوا۔
اِس وقت ہمارا ملک ہندوستان ایک دوراہے پر کھڑا ہے اور وطن عزیز میں اس وقت مقابلہ خیر وشر اور نیکی وبدی کا نہیں؛ بلکہ دو برائیوں کاہے اور ان دو میں سے کمتر برائی کے انتخاب کا مرحلہ درپیش ہے، ان حالات میں مسلمانوں کو گہرے تجزیہ کے ساتھ کام کرنے اور فہم و فراست کے ساتھ قدم آگے بڑھانے کی ضرورت ہے، مسلمانوں کو ایسی علاقائی اور قومی سیاسی جماعتوں سے معاہدہ کی بنیاد پر معاملات طے کرنے چاہئیں،  جن کو کم سے کم سیکولر ہونے کا دعویٰ تو ہو، ایک واضح ایجنڈے کے ساتھ ان سے گفت وشنید ہونی چاہئے۔ اس گفتگو سے متعلق خبروں کے ذرائع ابلاغ میں آجانے سے اندیشہ ہوکہ فرقہ پرست طاقتیں اس کو بہانہ بناکر برادران وطن کو اکسائیں گی،اور اپنے ووٹ بینک کو بڑھانے کے لئے اِس کا استعمال کریں گی،تو بہتر ہوگا کہ اس کی تشہیر سے گریز کیا جائے۔ 
ہمارے ملک میں کثیر جماعتی جمہوریت کا نظام رکھا گیا ہے، یہ طریقہ عوام کے حق میں بہتر ہوتا ہے؛ کیونکہ ان کو دوسے زیادہ اختیار حاصل ہوتا ہے؛ لیکن بدقسمتی سے اس وقت عملاً  ہمارا ملک دو جماعتی طرز حکمرانی کی طرف جارہا ہے، کمیونسٹ پارٹیوں کے زوال کی وجہ سے تیسرا محاذ نہایت کمزور ہے اور مستقبل قریب میں اٹھ کھڑے ہونے کی صلاحیت نہیں رکھتا، ان حالات میں مسلمانوں کو نہایت حکمت اور تدبر سے کام لیتے ہوئے قدم اٹھا ناچاہئے۔ حضرت عمرؓ نے فرمایا تھا کہ علم وحکمت کی بات یہ نہیں ہے کہ آدمی شر کے مقابلہ میں خیر کو اختیار کرلے؛ بلکہ دانائی یہ ہے کہ جہاں دوبرائیوں میں سے کسی ایک کو اختیار کرنے پر انسان مجبور ہو، وہاں کمتر برائی کا انتخاب کر کے بڑے نقصان سے اپنے آپ کو بچالے۔
 ایسی حالت میں جبکہ ہندوستان کے سیاسی افق پر فرقہ پرستی کی سیاہ گھٹا ئیں چھائی ہوئی ہیں، اگر ہم نے فراست ایمانی اور نور بصیرت سے کام نہیں لیا اور جذبات، ردعمل اور نعروں میں بہہ گئے تو اس سے دور رس نقصانات کا اندیشہ ہے، ضرورت ہے کہ مسلمان قائدین و رہنما پارٹیوں کی وفاداریوں سے نیز حقیر اور وقتی سیاسی مفادات سے اوپر اٹھ کر ملت کے مفاد میں اتحاد و اجتماعیت کے ساتھ کام کریں اورسفینۂ ملت کو بھنور سے نکالنے کی مخلصانہ کوشش کریں۔n

متعلقہ خبریں

This website uses cookie or similar technologies, to enhance your browsing experience and provide personalised recommendations. By continuing to use our website, you agree to our Privacy Policy and Cookie Policy. OK